اُردو صفحہ فیس بُک پیج

بلاگ

مودی پاکستان کا کچھ نہیں بگاڑ سکتا

پاکستانی فوج 28 فروری جیسا سرپرائز دینے کے لئے ہمہ وقت تیار ہےمکار مودی کی پاکستان کے خلاف ہرزہ سرائی اور اقوام۔عالم کی خاموشی ۔۔۔اور پاک فوج کا جواب ۔۔۔۔۔۔۔یہ بات تو طے ہے کہ بھارت پاکستان کا کچھ بھی نہیں بگاڑ سکتا پاکستان کو کمزور کرنے یا ختم کرنے کی بھارت کی ناپاک خواہش کبھی پوری ہونے والی نہیں بھارتی عسکری قیادت کی جانب سے دئیے گئے حالیہ بیان کہ 7 سے 10 دنوں میں پاکستان کو ختم کردینگے بلی کے خواب میں چھیچھڑوں کہ۔مترادف ہے بلکہ۔یوں کہئے کہ چھیچھڑے بھی نصیب ہونے والے نہیں ہیں اس احمقانہ بیان پر پاک فوج کے ترجمان میجر جنرل آصف غفور نے کیامنہ توڑ اور کراراجواب دیاکہ بھارتی فوج جو (80 لاکھ) کشمیریوں کوشکست نہیں دے سکی وہ (20 کروڑ 70 لاکھ) پاکستانیوں کو کیسے شکست دے سکتی ہے ۔

بھارتی قیادت کہتی ہے 7 سے 10 دن میں پاکستان کو ختم کر دیں گے، بات صرف 7 سے 10 دِن کی نہیں اس سے پہلے اور بعد کی بھی ہے مزید کہا کہ۔بھارت کی مسلط شدہ جنگ کا بھرپور جواب دیں گے اور پاکستان اور افواجِ پاکستان ہمیشہ آپ کو سرپرائز کریں گے،پہلے بھی کہا تھا جنگ شروع آپ کریں گے لیکن ختم ہم کریں یہاں سرپرائز سے مراد انکا اشارہ 2019 میں مگ 21 طیارے میں سوار کیپٹن ابھی نندن کی واپسی کی صورت میں دئے گئے سرپرائز کی جانب تھا شاید بھارت بھول گیا ہے پاکستان نے جو زور دار طمانچہ دیا تھا تو مودی سرکار کو یاد دلا دوں کہ مودی جی آپ اوربھارتی عسکری قیادت کے ناپاک عزائم کی تکمیل کے لئے مسٹر ابھی نندن مگ 21 میں سوار پاکستان کی سر حد میں گھس کر آپ کے سینے میں بھڑکتی نفرت کی آگ کو تسکین پہنچانا تو چاہ رہا تھا لیکن بے چارا اس چیز سے غافل۔ تھا کہ۔ پاک وطن کی سرحدوں کی حفاظت پر معمور وہ مرد مجاہد ہیں جو کوئی صرف نظر تو اٹھاکر دیکھے اس کو چیر پھاڑ کر رکھ دینگے ۔ بچارے ابھی نندن نے ابھی سرحدپار تک نہ کی تھی کہ بلند حوصلہ سینہ سپر جوان اس کے مکروہ عزائم جان گئے اور خوب مہارت سے بھارتی جہاز مار گرایا خوش قسمتی سےمہمان خصوصی بچ گر منہ کے بل زمین پر آ گرے پھر کیا تھا خوب پاکستانی عوام نے مہمان نوازی کی پاک فوج کے جوانوں نے دودھ پتی چائے پلائی اور ابھی نندن کو زندہ سلامت واپس لوٹا دیا یہ تو پاکستان کی ثواب دید تھی کہ با حفاظت واپس بھیجا گیا اور ایسا پہلی بار نہیں ہوااس سے پہلے بھی کئی بار اسطرح کے سرپرائزز پاکستان دیتا آیا ہے لیکن ابھی نندن کی واپسی امن کی جانب پاکستان کا اٹھایا گیا ایک اور قدم تھا لیکن نہ جانے بھارت کیوں امن کی خواہش کو کمزوری سمجھ لیتا ہے اب دیکھئے بھارت کے نئے آرمی چیف کو لگتا ہے کہ وہ کسی طرح پاکستان کا کچھ بگاڑ لینگے شا ید اب انکو بھی 2020 کے سر پرائز کا انتظار ہےتو زرا دھیرج رکھئے آپ کی خواہش بھی پوری ہو جائیگی ۔

جلدی کس بات کی ہے جناب مل جائیگا آپکو بھی سر پرائیز ۔۔۔۔۔ میں یہ بات بھی بتا دوں کہ پوری دنیا اور بھارت خود بھی بخوب جانتا ہے کہ پاکستانی فوج اور قوم مادر وطن کے دفاع کی خاطر جان کی بازی لگادینگے کوئی پاک سر زمین کو میلی آنکھ سے دیکھے وہ وقت آنے سے پہلے ہی اسکی آنکھ نوچ لینگے سرحدوں کی حفاظت کرتے جوان اپنے لہو کا کا ایک ایک قطرہ اپنےملک و قوم کی حفاظت اور دفاع کی خآطر بہانے کو ہمہ وقت تیار ہیں مودی کی بھول ہے کہ وہ پاکستان کا کچھ بگاڑ سکتا ہے۔۔اصل میں مکار مودی سے پاکستان میں امن وامان برداشت نہیں ہو رہا بھارت کی ہمیشہ سے یہی کوشش رہی ہے کہ کسی نہ کسی طرح سے پاکستان کو نقصان پہنچائے اور پاکستان کبھی ترقی نہ کرے اور اس کی معیشت برباد ہو جائے بھارت نے پاکستان میں اپنے ناپاک عزائم کی تکمیل کی خاطر ‏ہر بار پاکستان میں دہشت گردی کروائی بم دھماکے اور دیگر منصوبوں کے تحت پاکستان کو برباد کرنے کی بھرپور کوشش کی جس میں پاکستان میں ہزاروں جانیں بم دھماکوں کی نظرہوئیں جس کی زندہ مثال کلبھوشن یادیو ہے جس نے اس کا بارہا اعتراف بھی کیا جس سے اقوام عالم بھی واقف ہے جبکہ فرووری2019 کے واقعہ پر ڈی جی آئی ایس پی آر کا کہنا تھا فروری 2019 میں پاک بھارت جنگ دستک دے چکی تھی، افواج پاکستان کی تیاری اور مؤثر جواب نے امن کا راستہ ہموار کیا، پاکستانی قیادت نے اس خطرے کو احسن طریقے سے نمٹایا، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی سُپیریئر ملٹری اسٹریٹیجی نے جنوبی ایشیا کو بہت بڑی تباہی سے بچایا۔ بالکل یہی وجہ ہے کہ ہر بار پاکستان نے صبر کا مظاہرہ کیا کیونکہ پاکستان امن کا خواہاں ہے پاکستان کی ہمیشہ سے یہی کوشش رہی کہ خطے میں امن و امان قائم۔ہو اسی طرح بھارت نے پاکستان کو بدنام کرنے کے لئے پلوامہ جیسا ڈرامہ بھی رچایا لیکن ہاتھ تو پھر بھی کچھ نہ آیا بھارت خود تو اندرونی طور پر ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہے ہی اور خواب دیکھ رہا ہے پاکستان کو توڑنے اور ختم کرنے کے ‏بھارت کی اپنی ریاستوں میں آگ لگی ہوئی ہے سکھ برادری علیحدہ ملک کا مطالبہ کر رہی جب کہ ہندوں اپنی نچلی ذات کے ساتھ بھی نارواں سلوک رکھے ہوئے ہیں جگہ جگہ ریلیاں دھرنے پورے بھارت خود بربادی کی جانب گامزن ہے اپنے ملکی حالات سے آنکھ چراتا بھارت کس منہ سے دنیا بھر میں امن کا داعی ہونے کا دعوہ کرتا ہے 5 ،اگست 2019 کو بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں کرفیو نافذ کیا جوکہ تا حال جاری ہے نام۔نہاد آپریشن کے نام پر ہر روز معصوم۔

نہتے کشمیریوں کو شہید کیا جا رہا ہے جس کی پاکستان نے سخت مخالفت کی اور دنیا بھر میں کشمیر کا مقدمہ دیانت داری کے ساتھ لڑا اور عالمی برادری کے سامنے بھارت کا مکروہ چہرہ عیاں کیا اور پاکستانی وزیراعظم نے جس طرح عالمی فورم پر کشمیر میں جاری ریاستی دہشتگردی کی جانب دنیا بھر کی توجہ مبذول کر وائی وہ قابل دید ہے جس کے بعد متعدد بار امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بھی اس معاملے پر ثالثی کی پیشکش کی جس کو حڈ دھرم۔ مودی نے ٹھکرا دیا ۔ اصل میں تو ہٹلر مودی کو مسلمانوں کا وجود برداشت نہیں جب ہی بھارت میں ایک جانب کرفیو نافذ کیا تو دوسری جانب متنازع شہریت بل پیش کردیا گیا ہے جس سے بھارتی مسلمانوں کے نہ صرف جذبات مجروح ہوئے بلکہ وہ دوہری اذیت میں گرفتار ہوئے کہ کس طرح سے پہلے ہی کبھی گاو ماتا تو کبھی کوئی اور بہانے بناکر مسلمانوں کو تششد کا نشانہ اور قتل کیا جاتا رہا ہے اور اب ان سے شہریت بھی چھینی جا رہی ہے جس کے حق میں ان کے اپنے ہندو بھی نہیں ہیں اور مودی کے اس اقدام کی سخت مخالفت کر ریے ہیں جبکہ پاکستان کی بات کی جائے تو پاکستان میں جتنے بھی مختلف مذاہب سے وابستہ لوگ رہتے ہیں انکو یہاں مذہبی آزادی بھی حاصل ہے انکی عبادت گاہیں بھی محفوظ ہیں کسی قسم کی روک ٹوک کاسامنا نہیں اور تو اور کرتارپورراہ داری اس کی واضح مثال ہے جوکہ کھولی جا چکی ہے جس کی وجہ سے سکھ یاتریوں کی آمد کا سلسلہ بلا خوف و خطر پاکستان میں جاری ہے جس سےسکھ کمیونٹی میں پاکستان کی عزت اور وقار میں اضافہ ہوا ہے جوکہ بھارت سے کسی طور سے برداشت نہیں ہورہا اور اپنی ہی آگ میں جلن کا شکار مودی سرکار آگ بگولہ ہے کہ کسطرح پاکستان کے امن کو برباد کیا جائے اور کسطرح دنیا بھر میں پاکستان کو رسوا کیا جائے لیکن افسوس ان اوچھے ہتھکنڈوں سے بھارت اپنی ہی عزت جو کہ کبھی تھی ہی نہیں اور جو بچی کچی تھی بھی کی دھجیاں اڑا رہا ہے اور اب بھارت یہ حتی الامکان کوشش کر رہا ہے کہ پاکستان کا سکون برباد کیا جا ئے نقصان پہنچایا جائےجیسا کہ یہ آئے روز ایل او سی پر گولہ باری کرکے اور عام شہری آبادی کو نشانہ بناکر کررہا ہے جسکا پاکستان کی جانب سے ہر بار منہ توڑجواب دیا تو جاتا ہی ہے لیکن افسوس عادت سے مجبور مودی باز نہیں آرہا بھارت کی ان مکروہ کاروائوں سے پاکستان نے عالمی براادری کو بھی بارہا آگاہ کیا اور تمام ترگھناونی سازشوں اور کاروائیوں کی تفصیلات بھی پیش کیں۔ اور یہی نہیں۔ کشمیر کے لئے بھی ہر بار یہاں سے آواز اٹھائی گئی جس کے بعد اب پوری دنیا ہٹلر مودی کے مذموم۔ عزائم سے واقف ہوچکی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن بات یہاں ۔۔۔ختم۔ نہیں ہوتی کہ پوری دنیا بھارت کے ناپاک عزائم سے واقف ہے یا نہیں

بلکہ تشویش تو یہ ہے کہ بھارت کی جانب سے کی جانے والی ان تمام مکروہ حرکتوں پر عالمی برادری خاموش تما شائی کیوں بنی ہوئی ہے کیونکر بھارت کے خلاف کوئی کاروائی نہیں کی جاتی آخر وجہ ہے کیا اب دیکھئے نا جس طرح سے آج مودی پاکستان کو کھل کر جنگ کی دھمکیاں دے رہا ہے اور دھڑلے سے کہہ رہا ہے کہ 7 سے ،10 دن میں پاکستان کو ختم کردیں گے کوئی معمولی بات نہیں کھلم کھلا دہشت گردی ہے لیکن عالمی برادری سو رہی ہے آپ خود سوچیں کہ بھارت کی جانب سے پاکستان کو ختم کرنے کا بیان دیا گیا ہے اگر اسطرح کا کوئی بیان پاکستان کی جانب سے دیا گیا ہوتا تو عالمی برادری پاکستان کے پیچھے ہاتھ دھو کر پڑ جاتی گویا کہ پاکستان کے خلاف محاظ ہی قائم۔ کرلیا جاتا اور .. پاکستان کو ایک غیر ذمہ دار ریاست قرار دے دیا جاتا..مسئلہ صرف اتنا ہے کہ عالمی برادری کی یہ خاموشی اس بات کا ثبوت ہے کہ یہاں بھارت کے ساتھ انکے معاشی مفادات ہیں اس لیے کسی نے بھارت کی مودی سرکار کی مزمت نہیں کی لیکن یہاں عالمی برادری کی خاموشی قابل۔ مذمت ہے اور تشویشناک بھی ہے ۔۔۔۔ جوکہ بھارت کے حالیہ بیان سے ثابت ہوچکا ہے ۔جسکا انکو سخت نوٹس لینا چاہئے۔۔۔یہاں میں ایک بات اور بھی واضح کردینا چاہتی ہوں کہ پاک فوج نے میجر جنرل آصف غفور کو جی او سی اوکاڑہ جب کہ میجر جنرل بابر افتخار کو ڈائریکٹر جنرل آئی ایس پی آر تعینات کر دیا ہے۔ اور آج یکم۔فروری سے اپنی تمام تر ذمہ داریاں سنبھال لینگے پاک فوج کے اس فیصلے کے بعد سے بھی بھارتی عسکری قیادت میں کافی کھلبلی مچی ہوئی ہے جوکہ بھارت کے حالیہ بیان سے ثابت ہوچکا ہے۔۔۔اور بھارت کوئی نہ کوئی مس ایڈونچر کرنا چاہ رہا یے جیسا کہ وزیر خارجہ شاہ محمود کی جانب سے پہلے بھی کہا جا چکا ہے بھارت کا پیٹ درد بڑھتا جارہا ہے ۔۔۔۔

لکھاری کے بارے میں

ثنا کریم

ثنا کریم
اینکر پرسن اور کالم نگار ہیں اور بول نیوز کے لیے اپنی خدمات سر انجام دے رہی ہیں۔

Loading...