ابھی کچھ لوگ باقی ہیں جو اُردو بول سکتے ہیں

ھنگوکی ڈائری – سفرنامہ

کچھ ماہ پہلے خیبرپختونخواہ کے جنوبی اضلاع میں جانے کا موقع مِلا۔ شمالی پختونخواہ تواب اپنے گھر جیسا لگتا ہے لیکن جنوبی علاقوں کی طرف جانے کا یہ پہلا اِتفاق تھا۔ ہمارا سفر پِشاور سے دوآبہ براستہ بڈھ بیر، متانی، درہ آدم خیل، کوہاٹ، استرزئی اور ھنگو تک کا تھا۔ پشاور شہر میں بارش کی وجہ سے حبس کا راج تھا۔ لیکن جیسے ھی ہم شہر کی حدود سے باہر نِکلے تو ٹھنڈی ہوائوں نے ہمارا اِستقبال کیا۔ پشاور سے باہر سب سے پہلا علاقہ “بڈھ بیر” کا آیا۔ یہ جگہ اپنے فوجی اڈے کی وجہ سے کافی مشہور ہے۔ اس سے آگے چھوٹے چھوٹے قصبے آتے رہے اور پھر “تورغر” کی پہاڑیاں شروع ہو گئیں۔ دِلفریب نظارے، خوبصورت پہاڑ، ٹھنڈی ہوا کا ساتھ اور پکی سڑک کا سفر یوں محسوس ھوتا تھا جیسے ہم ہنزہ یا گلگت کی جانب گامزن ہوں۔اللہ کی شان خیبرپختونخواہ کا جنوب بھی شُمال ہی کی طرح حسین ہے۔

میں نے جب موبائل دیکھا توپتہ چلا کے کچھ دیر بعد ہم قبائلی علاقہ جات کے علاقے “درہ آدم خیل” سے گزرنےوالے ہیں۔ درہ آدم خیل “اورکزئی ایجنسی” کا وہ حِصہ ہے جو پختونخواہ کے اندر تک چلا گیا ہے۔ یہ درمیانے حجم کے پہاڑوں والا خوبصورت علاقہ ہے جو پورے برِاعظم ایشیاء میں “کلاشنکوف” بنانے کے حوالے سے مشہور ہے۔ اِس سے آگے ضلع کوہاٹ شروع ہو جاتا ہے۔ یہاں پُختہ سڑک اور اوپر سے ہلکی ہلکی بارش نے سفر اور بھی آسان کر دیا۔ کچھ دور پہاڑوں کو بادلوں نے چاروں اطراف سے گھیر رکھا تھا اور ایک خوابیدہ سا منظر قُدرت نے میری آنکھوں کے سامنے لا کھڑا کیا۔ میں تو محو ہو کر گاڑی سے باھر ہی دیکھے جا رہا تھا کہ اچانک ایک سائن بورڈ پہ نظر پڑی تو دِل دھک سے بج اُٹھا۔ یہ “کوہاٹ ٹنل” کا بورڈ تھا۔ میں بنائی کئی اِس سرنگ گو حکومتِ جاپان کے تعاون سے مکمل کیا گیا تبھی اسے بھی کہتے ہیں۔ یہ ٹنل کوہاٹ شہر سے ذرا پہلے آتی ہے اور واقعی دیکھنے سے تعلق رکھتی ہے۔ اسے دیکھنے کی بہت پرانی خواہش تھی میری، اللہ تعالی نے وہ بھی پوری کردی۔ دلکش نظاروں کے بیچ ھنگو سے ہو کر ہم اپنی منزل دوآبہ پہنچ گئے۔

دوآبہ ضِلع ھنگو کی ایک سب تحصیل ہے جو مقامیوں کے مُطابق عنقریب تحصیل کا درجہ حاصل کرنے والا ہے۔اِسکے نام کی وجہ تسمیہ یہ ہے کہ یہ دو ندیوں کے سنگم پر واقع ہے۔ یہ ایک چھوٹا سا اخوبصورت شہر ہے جس سے 70کلومیٹر آگے ٹل اور 110 کلومیٹر کے فاصلے پر “کُرم ایجنسی” کا علاقہ “پاراچنار” ہے۔ دیگر پاکستانیوں کی طرح یہاں کے لوگ نہایت مہمان نواز اور خُوش مِزاج ہیں۔ ان کی سرشت میں اللہ تعالیٰ نے مہمان نوازی کوٹ کوٹ کہ بھری ہے۔ بوڑھوں سے لے کر نوجوانوں اور بچوں تک سب خندہ پیشانی سے مِلتے ہیں۔ بس آپ انکو پشتو میں “سنگے” کہہ دو ایک بھرپور مُسکراہٹ کے ساتھ “خیر دے” کہہ کر یہ آپکو جواب دیں گے۔میں نے یہاں کبھی دو لوگوں کو آپس میں بدتمیزی سے بات کرتے نہیں دیکھا۔

اِس علاقے میں بنگش قوم کی اکثرت ہے۔ یہاں کے زیادہ تر لوگ “مُملکتِ قطر” میں ملازمت کرتے ہیں۔ یہاں کے تقریباٗ ہر گھر کا ایک فرد آپکو قطر، کویت، سعودیہ یا امارات میں ملے گا یہاں تک کہ 70 سال کے بوڑھے بھی اپنی جوانیاں قطر کی نزر کر چُکے ہیں۔ اور تو اور یہاں کی تقریبا ہر مسجد اور اُس میں رکھے گئے قُرآنِ کریم کے نُسخے بھی قطر کی طرف سے ہدیہ ہیں۔ میں نے پہلی بار بھنڈی، ہری مِرچ، ٹماٹروں کے کھیت اور املوک کے درخت اس علاقے میں دیکھے۔ یہاں زیادہ تر گرم مصالحے، ڈرائی فروٹ، کپڑے پھل اور سبزیوں کا کاروبار کیا جاتا ہے۔

یہاں سِکھوں کی بھی ایک بڑی تعداد رہتی ہے۔ جو پاکستان سے محبت کرتی ہے۔ 14 اگست کو یہاں کے لوگوں نے بہت جوش و جزبے سے منایا۔ اِتنا جزبہ میں نے پاکستان کے چھوٹے شہروں میں کم کم ہی دیکھا ہے۔ یہاں پہ لوگوں میں تعلیم کا بہت زیادہ رحجان ہے یہاں تک کہ پنجاب کے دیہی علاقوں سے بھی زیادہ۔ زیادہ ترنوجوان آگے چل کر ڈاکٹر، انجینیئر اورعالِم بننا چاہتے ہیں۔ جبکہ صحت کا نظام ناگفتہ بہ ہے۔ یہاں کی مشہور ترین خوراک لوبیا ہے جِسے پکا کر، اُبال کر، تل کر غرض ہر طریقے سے کھایا جاتا ہے۔ اِسکے علاوہ ” اوریجے”(جسے میں ڈیم والے چاول کہتا تھا)بھی کافی مشہور ہے۔

یہ ایک طرح کی کھچڑی ہے جِسے ایک بڑی ڈِش میں پہاڑی کی شکل میں پیش کیا جاتا ہے۔ اس کے درمیان میں چوٹی پر ایک دائرہ بنا کہ اُس میں گرم گرم دیسی گھی بھرا جاتا ہے۔ یہ سارا منظر ایک چھوٹے ڈیم جیسا لگتا ہے۔ پھر چاروں جانب سے اِس میں شگاف ڈال کر گھی کو چہار جانب پھیلایا جاتا ہے۔ اسکو کھانے سے زیادہ اسکو دیکھنے کا مزہ ہے۔ یہاں کی موٹی روٹی پنجاب اور سندھ والوں کے حلق سے نیچے نہیں اُترتی۔ کھانے کے بعد قہوے کی بجائے چائے کا رواج زیادہ ہے۔ پھلوں میں یہاں کا صحت مند اور رسیلا “کالا انگور” اپنی مثال آپ ہے۔

یہ ایک بڑے سائز کے جامن کے برابر ہوتا ہے۔ چاروں جانب پھیلی پہاڑٰیوں اور یہاں کے موسم نے اِس علاقے کا حُسن دوبالا کر دیا ہے۔پختونخواہ کے جنوبی اضلاع شمالی اضلاع کی نسبت کچھ پسماندہ ہیں۔ یہاں معیارِ تعلم تو اچھا ہے لیکن صحت و صفائ کی سہولیات ناکافی ہیں۔ دوآبہ کے لوگ اسپتال کے لیئے ٹل یا ھنگو کا رُخ کرتے ہیں۔ اکثر و بیشتر جگھوں پہ گندگی کے ڈھیر ہیں اُس کے باوجود بھی اس شھر میں خُوشیاں بہت ہیں اور لوگ مطمئن ہیں۔ بچے بالے شام کو پہاڑیوں پر کرکٹ اور والی بال کھیل رہے ہوتے یہں۔ آخر میں،میں آپ کو بتانا چا ہوں گا کہ یہ علاقہ بہت پُر امن ہے۔ ایک زمانہ تھا جب یہاں ڈرون حملے ہوتے تھے لیکن یہ بہت پُرانا قِصہ ہے۔ آج فاٹا اور پختونخواہ کے یہ علاقے پاکستان کے دوسرے علاقوں کی طرح پرامن اور محفوظ ہیں۔ اللہ غارت کرے پاکستانی میڈیا کو کہ جس نے اِس ملک کا مثبت چہرہ کبھی نہ پیش کرنے کی قسم کھا رکھی ہے ۔ اللہ تعالیٰ پاکستان کی حفاظت فرمائے۔۔۔۔۔

آمین
پاکستان زندہ باد
محمد عظیم شاہ بخاری

تبصرے
Loading...