ادب

فلم منٹو: کل اور آج

کتنی عجیب بات ہے کہ سترسے اسّی سال گزر جانے کے بعدآج بھی’سعادت حسن منٹو‘متنازع ہے۔ سوال یہ ہے کہ اتنی دہائیاں گزر جانے کے بعد بھی ہمارے معاشرے میں ،ہماری نفسیات میں کیا تبدیلی آئی ہے ؟ زمانے کی ترقّی کے باوجود اخلاقی گراوٹ کے اس پاتال سے نکلنا کیا اتنا ہی مشکل ہے ۔ یا یہ دنیا ازل سے ابد تک سماجی بہبود کے خواہاں کو کٹہرے میں کھڑا کرنے کی اپنی روش پر قائم رہے گی۔ ان برسوں میں کچھ ہوا ہو یا نہ ہوا ہو،اتنا تو ضرور ہوا کہ منٹو کی ادبی حیثیت کسی ایک زبان ، خطے اور ملک کی مرہون منت نہیں رہ گئی۔ وہ ادبی دنیا کا لیجنڈ تھا ،ہے او رہیگا۔ وقت کے اس سفر نے منٹو کے نام اور کام کو دھول میں مٹنے نہیں دیا بلکہ اس کا ایک ایک حرف ادب میں نگینے کی طرح جگمگا رہا ہے اور معاشرہ آج بھی سیاہ حاشئے کی زد میں ہے۔ منٹو کی ادبی حیثیت اپنا آپ منوا چکی ہے۔کئی نسلیں اس کی تقلید میں کیا کچھ لکھتی رہیں مگر ’منٹو‘ نہ بن سکیں۔حالانکہ ہمارا معاشرہ تنزلی کے اور گہرے گڑھے میں جا چکا ہے۔ عورتوں اورطوائفوں کا درد اتنی گہرائی سے محسوس کرنے والے منٹو کے وہم و گمان میں نہ ہوگا کہ برسہا برس بعد ترقی کی بلند و بالا عمارتوں میں بسنے والے انسانوں کی ناپاک حرص و ہوس شریف گھرانے کے ننھی نا سمجھ پھولوں کو اپنی زد میں لینے لگینگی ،پھر بھی کوئی ایشر سنگھ تخلیق نہ ہو سکیگا۔اپنے اپنے آزاد ملک میں بیٹھ کر بھی ’کھول دو‘ سے زیادہ دل دہلانے والے واقعات رونما ہوتے رہینگے۔ اور ملک کی تقسیم کے درد میں مر جانے والے مخبوط الحواس ’ٹوبہ ٹیک سنگھ‘ بھی آج کے ا ن ہوشمند انسانوں سے زیادہ حساس اور باشعور ثابت ہوگا ،جو انسانی گوشت اورپوست کی دھجیاں اڑا کر سرخ رو گھومتے ہیں۔ اس تناظر میں یہ بات کتنی مضحکہ خیز ہے کہ آج بھی جب ’منٹو ‘ جیسے لیجنڈ پر فلم بنتی ہے تو اس پر پابندی لگائی جاتی ہے اور لوگوں کو احتجاج کرنا پڑتا ہے۔ جیسے 1940 میں انہیں کٹہرے میں کھڑا کر دیا جاتا تھا۔ اس وقت ان کی ادبی قدر و قیمت پر شک و شبہات رکھنے والے بہت تھے مگر آج تو ایسا نہیں ہے۔ پھر وہ کون اور کیسے لوگ ہیں جو منٹو کے اٹھائے ہوئے سوالات سے آج بھی ڈرتے ہیں۔

’منٹوآخر منٹو کیسے بنا؟‘یہ امر دلچسپی سے خالی نہیں کہ شخصیت اور کردار میں ایسا کون سا پہلو یا رنگ ہوتا ہے کہ وہ لا فانی بن جاتا ہے اور دوسروں سے منفرد اور ممیز ہو جاتا ہے۔اس سوال کا جواب منٹو سے منٹو بننے میں ہی پوشیدہ ہے ۔ جسے نندیتا داس نے اپنی فلم میں بہت کامیابی سے پیش کر دیا ہے۔ادب ہو یا فلم وہ وقت کا آئینہ ہوتا ہے اور اس میں اس عہد کی تصویر دیکھی جا سکتی ہے۔ جبکہ ادب ایک خاص حلقے تک محدود رہتا ہے اور فلم کا میڈیم ہر خاص و عام تک پہنچنے کا ذریعہ بنتا ہے۔ فلم ایک ایسا میڈیا ہے جس میں کئی فنون کی آمیزش ہوتی ہے اس لئے اس کے ذریعے کم وقت میں زیادہ موئثرڈھنگ سے پیشکش ممکن بنایا جا سکتا ہے۔ جبکہ تحریر میں قاری اپنے تخیل کو بروئے کار لاتا ہے اور اپنی استعداد کے مطابق ادراک حاصل کرتا ہے۔مگر اسکرین پر ایک پورے عہد کو اور ایک ایسی شخصیت کو اتارنا جس کے گونا گوں پہلو ہوں ۔۔۔ کوئی آسان کام نہیں تھا۔ مگر نندیتا داس نے یہ کیا اور بڑی خوبی سے کیا۔ اس پر آشوب دور کو پس منظر میں اس حد تک ہی رکھا جس سے منٹو کو سمجھنے میں آسانی ہو۔ نندیتا داس کا مقصد منٹو کو پیش کرنا تھا ، اس کی نفسیات ، اس کا عہد ، اس کی مشکلات اور اس کا درد جس نے منٹو کو منٹو بنایا ۔۔۔ وہ نندیتا داس نے کمال مہارت سے پیش کیا ہے۔

جب سے یہ فلم ریلیز ہوئی تھی ، مثبت اور منفی تبصرے سننے میں آرہے تھے ۔ ادب سے رشتہ رکھنے والا ہر ذہن اپنے اندر منٹو کا ایک خاکہ رکھ کر فلم کو دیکھنے بیٹھا ہوگا ۔۔اس لئے ایسے تبصرے غیر متوقع نہیں تھے۔ میں نے اس فلم سے زیادہ توقع نہیں باندھی ۔۔۔ مگرنندیتا داس کے لئے پسندیدگی اور نواز الدین صدیقی کے فن پر اعتماد ضرور تھا۔اور منٹو کی شخصیت سے لگاﺅ۔ اس لئے دیکھنا بھی چاہتی تھی ۔ اسے دیکھنے کے درمیان میں جلد ہی بھول گئی کہ میں اپنے کمرے میں ٹی وی کے سامنے منٹو کو نہیں بلکہ نواز الدین صدیقی کو دیکھ رہی ہوں۔ میں اپنے سامنے منٹو کو دیکھ رہی تھی ،منٹو کے عہد کو دیکھ رہی تھی، اس کے جنون ، اس کی خودداری اور کمزوری کو دیکھ رہی تھی، میں اسے افسانہ لکھتے ہوئے دیکھ رہی تھی۔ کب دیکھتے دیکھتے اس کے کردار کو جینے لگی مجھے اندازہ ہی نہیں ہوا۔ اس کی تکلیف، اس کی بے بسی ، زمانے کا جارحانہ رویہ، شراب نوشی کی کمزوری بیوی اور بیٹیوں سے محبت اور دوستوں اور اپنوں کے بدلتے رویے۔ وہ سب کچھ جس نے منٹو کو منٹو بنا دیا۔ منٹو کی زندگی میں ناکامی اس کی حد سے بڑھی ہوئی حساسیت تھی اور منٹو کی ادبی کامیابی بھی اس کی یہی حساسیت تھی۔

اس فلم میں نواز الدین کی ایکٹنگ میں منٹو کا کردار اور منٹو کی نفسیات اس کی حسّاسیت اور اس کا درد مجسم ہو گیا ہے، اسکے علاوہ فلم کی کہانی میں منٹو کی تخلیقات اور اس کے کرداراور اس کا عہد، ایک نقطے پر سمٹ آئے ہیں۔ اور آخر میں بچا ہے درد صرف درد۔۔ منٹو کی اہلیہ صفیہ کا کردار نبھاتی راسیکا دگل نے بھی بہت کامیاب اداکاری کی ہے ۔ زندگی اور اس کی ضرورتیں اور محبت اور اس کے تقاضے ان کے کردار میں ایک کشمکش اور یاس کی شکل میں ڈھل کر پوری طرح صفیہ کے کردار میں ابھر آیا ہے ۔ فلم کا سٹ لباس اور منٹو کے گرد بنے گئے کردار اس کی شخصیت کو نکھارتے ہیں اور کہیں بھی مصنوعیت کا پہلو نہیں ابھرتا اور یہ نندیتا داس کی ہدایت کاری کا کمال ہے۔اب یہ بحثیں کوئی معنی نہیں رکھتیں کہ منٹو فحش نگار تھا یا نہیں؟ کیا اس کی تخلیق ادب سے خارج تھی ؟ ۔مگر اس بحث نے منٹو کی زندگی پر کیا اثرات مرتب کئے ؟، یہ معنی رکھتا ہے اور نندیتا داس نے منٹو فلم میں اس کی شخصیت کے ساتھ پورا پورا نصاف کیا ہے۔۔منٹو کو اب کسی شہرت کی ضرورت نہیں۔۔۔ مگر منٹو کو صحیح انداز میں سمجھنا اس زمانے کی ضرورت ہے ، اس کی تقلید کرنے والوں کو اسے سمجھنے کی ضرورت ہے ، ہماری آنے والی نسلوں کو اس کی ضرورت ہے ۔ اور اس ضرورت کو نندیتا داس کی اس کاوش نے بہ حسن و خوبی پورا کیا ہے۔ اسے دیکھ کر ہم اس حقیقت کو سوچنے اور سمجھنے پر مجبور ہوتے ہیں کہ کیا یہ کہانیاں منٹو کے لئے لکھنا اتنا آسان تھا۔۔۔؟ منٹو نے جو لکھا وہ اس درد کو جی کر لکھا ،اس میں ڈوبنے کی یا اسے اوڑھنے کی اسے ضرورت نہیں تھی کیونکہ وہ اس درد کو جی رہا تھا محسوس کر رہا تھا۔۔۔ وہ اپنی زندگی کی ساری ضرورتوں اور ذمہ داریوں سے بھاگ کر خون تھوک کر لکھتا رہا ۔

فلم منٹو کسی پرانی کہانی کی نئی قرائت نہیں ہے ۔ بلکہ اس فلم میں منٹو کی شخصیت کو، اس کی تخلیقات اور اس کے کرداروں کو ساتھ ہی ا س کے انتشار سے پر اس عہد کی اتنی ہی تفصیل کو جس سے اسے سمجھنے میں ہمیں مدد ملے ، ان سب کو بلنڈ کرکے ایک جیتے جاگتے منٹو سے ہماری ملاقات کروانے میں نندیتا داس بہت کامیابہ رہی ہیں۔

نسترن احسن فتیحی… علیگڑھ۔ انڈیا