اُردو صفحہ فیس بُک پیج

بلاگ کالمز

دوستی کا جال۔۔!

جنوری کا پہلا ہفتہ موسم سرما اپنے جوبن پر سورج دیوتا بادلوں کے اُس پار گہری نیند سو گیا تھا مسلسل ابر آلود موسم برفیلی ہوا ئیں پہاڑی علاقوں میں مسلسل برف باری کی وجہ سے پورا ملک برفیلی ہواﺅں کی وجہ سے ٹھنڈا ٹھار یخ برفشاں بن چکا تھا ‘شہر لاہور بھی مسلسل بارشوں اور برفیلی ٹھنڈی ہواﺅں کی وجہ سے منفی سینٹی گریڈ کے قریب آگیا ‘شام ڈھلتے ہی انسان چرند پرند جانور گھروں کو نوں کدروں میں دبک جاتے تاکہ منفی درجہ حرارت کی جان لیوا ٹھنڈ سے بچ سکیں پہلے لوگ موسم سرما دسمبر کا انتظار کر تے تھے لیکن اِس بار کی سردی تو جان لیوا ہو گئی تھی اتنی شدید سردی انجوائے کر نے والی نہیں بلکہ جان بچانے والی تھی میں بھی حسب معمول شام ڈھلنے سے پہلے ٹھنڈ ے ٹھار لاہور کی کینال سڑک پر گھر کی طرف گامزن تھا‘

بوندا باندی آسمان بادلوں سے ڈھکا ہوا تیزٹھنڈی ہوائیں آرام د ہ گاڑی میں حرارت آمیز ہیٹر آن تھا جس کی گرما گرم ہوا ہمارے جسموں کو زندگی بخش حرارت کا فیض بانٹ رہی تھی شدید سردی سے بچاﺅ کے لیے میں اور میرے دوست نے راستے سے گرما گرم کافی کے مگ بھی پکڑ لئے تھے اب ہم ہاتھوں میں مزے دار گرما گرم تلخ و شیریں کا فی کے سیب لیتے ہو ئے آگے بڑھ رہے تھے گاڑی کاحرارت آمیز ماحول اور حلق اُترتی گرما گرم مزے دار کافی نے اچھا ماحول بنا دیا تھا ہمارے جسم اب سردی کا اچھے طریقے سے مقابلہ کرتے نظر آرہے تھے کافی کے گرما گرم چند گھونٹ لینے کے بعد اعصاب عضلات نارمل ہو گئے تھے اب میں اچھے موڈ میں اطراف کی گاڑیوں کو دیکھنا آگے بڑھ رہا تھا جیسے ہی ہم انڈر پاس سے نکلے تو راستہ کشادہ ہوا تو کسی امیر زادے کی پراڈو پیچھے گن مینوں کا ڈالا گزر ا امیر زادے کی رفتار اور انداز بتا رہے تھے کہ وہ اِس شہر اور سڑک کا اکلوتا مالک ہے جیسے ہی پراڈو میرے پاس سے گزری تو فرنٹ سیٹ پر نسوانی جوان چہرہ دیکھ کر میرے بدن میں تو شاید آگ ہی لگ گئی جوان لڑکی کا خوبصورت چہرہ آتش فشاں کے گو لے کی طرح پھٹا اور میرے تن بدن میں آگ لگ گئی لڑکی اور میری آنکھوں کا ایک لمحے کے لیے ٹکراﺅ ہوا مجھے دیکھتے ہی اُس کے چہرے پر حیرت پریشانی پھر شرمندگی کے گہرے رنگ پھیلتے چلے گئے

مُجھ سے نظریں چار ہو نے سے پہلے اُس کے چہرے پر قہقہوں کی موسلا دھار بارش برس رہی تھی لیکن مجھے دیکھ کر وہ پریشان ہو گئی تھی اِسی دوران پراڈواور گن مینوں کا ڈالا تیزی سے آگے نکل گیا گاڑیاں تو گزر گئیں لیکن میںاپنی سیٹ کے کو نے پر آکر اُنہیں دور جاتا دیکھتا رہا میرا یہ ری ایکشن میرے دوست کے لیے حیران کن تھا وہ حیران پریشان نظروں سے میری طرف دیکھ رہا تھا وہ سمجھ رہا تھا شاید امیر زادہ بد تمیزی سے گزرا ہے اِس لیے میں پریشان ہو گیا ہوں جب سچ گاڑیاں نہیں بلکہ فرنٹ سیٹ پر بیٹھی لڑکی تھی لڑکیاں تو ہر دوسری گاڑی میں ہو تی ہیں لیکن یہ تو ناز تھی ( فرضی نام ) اور میں ناز کو جانتا تھا جو مُجھ سے ملنے بھی آتی رہی تھی ۔ جب میرے پاس آتی تھی تو بہت سادہ اور شریفانہ لباس میں اِس میں کو ئی شک نہیں کہ وہ بلا کی حسین تھی لیکن آج تو اُس کا انداز ہی بدلا ہو اتھا آ ج اُس نے اپنے بالوں کو سنہرا کلر کروا کر ڈیزائن دار بنایا ہوا تھا آنکھوں میں گرین لینز اور چہرے پر تیز میک اپ اور ہونٹوں پر شوخ لپ اسٹک نے اُس کے حسن میں آگ بھر دی تھی حسن کی اِس آگ کو وہ بطور ہتھیار استعمال کر رہی تھی نا ز کو دیکھ کر میں غصے کی آگ میں جھلسنے لگا لیکن پھر یہ آگ مدہم پڑتی گئی اب غصے کی جگہ پچھتاوا اور شرمندگی میری رگوں میں ڈورنے لگی اب میں غصے اور شرمندگی کے جھولے جھولتا گھرآگیا کھانا کھایا نئی کتاب پڑھنا شروع کی اپنی شروع کی ہو ئی کتاب لکھنے کی کو شش کی لیکن اعصاب دماغ بو جھل تھے کو ئی بھی کام کرنے کو دل نہیں کر رہا تھا اب میری شرمندگی اور پچھتاوا احساس ندامت میں بد ل گیا تھا کہ ناز آج اگر اِس مقام پر ہے تو اِس میں میرا بھی پورا قصور ہے

کیونکہ وہ مدد مدد پکارتی میرے پاس بھی آئی تھی جب میں نے بھی اُس کی مدد نہ کی تو مجبورا اُسے یہ راستہ اختیار کر نا پڑا ندامت کی آنچ میری ہڈیوں کے گودے تک پہنچنے لگی تو میں صوفے کی پشت سے ٹیک لگا کر اُس ملاقات کو یاد کر نے لگا جب ناز پہلی بار میرے پاس میرے آفس آئی تھی وہ سر کاری محکمے میں گریڈ 11کی ملازم تھی اُس کا باس اُس سے کسی بات پر ناراض ہو گیا تھا اُس نے غصے میں آکر تبادلہ پنجاب کے دور دراز علا قے میں کر دیا تھا اب وہ بیچاری اپنی ٹرانسفر کینسل کرانے کے چکر میں اِدھر اُدھر ہاتھ پاﺅں مارتی ہو ئی میرے پاس آگئی تھی کہ کو ئی وظیفہ بتائیں کہ اُس کا تبادلہ رک جائے میں نے وظیفہ بتا دیا اِس سلسلے میں وہ تین چار بار میرے پاس آئی آخری ملاقات میں اُس نے ایسی بات کر دی کہ میں نے اُسے اپنے پاس آنے سے منع کر دیا کہ دوبارہ زندگی میں کبھی میرے پاس نہ آئے مجھے آج بھی آخری ملاقات یاد ہے جب وہ آئی اور کہنے لگی سر آج میں نے تنہائی میں آپ سے ملنا ہے اور پھر تنہائی میں جب اُس نے کہا سر آپ مجھ سے دوستی کر لیں مجھے اپنی keepبنا لیں اِس کے بدلے میں میری مدد کر دیں اُس کی بات سن کر مجھے لگا اُس نے میرے منہ پر تیزاب پھینک دیا ہو میری رگوں میں بچھو دوڑنے لگے میں اُس کی جرات اور بے باکی پر حیران تھا اُس کو خوب ڈانٹا اور کہا چلی جاﺅں جاتے جاتے وہ کہہ گئی سر اِس معاشرے میں زندہ رہنے کے لیے کسی طاقت ور انسان کا دست شفقت چاہیے ہو تا ہے

مزید پڑھیں: کیا روزانہ ایک انڈا کھانے سے صحت خراب ہوتی ہے؟

ورنہ بھیڑیوں کا یہ معاشرہ میرے جیسی بے آسرا بچیوں کو ادھیڑدیتا ہے اِن بھیڑیوں سے بچنے کے لیے کسی طاقت ور کی نو کری کر نا پڑتی ہے آپ کے پاس میں نے معاشرے کے بااثر منسٹر بیوروکریٹ دیکھے تو اِس لیے آپ کو دوستی کی آفر کی کہ آپ میری مدد کردیا کریں گے ورنہ خونخوار درندے مجھے اِس معاشرے میں جینے نہیں دے رہے جہاں نو کری کر تی ہوں وہاں میرا باس اپنی ناجائز خواہش کی تکمیل کے لیے تنگ کر تا رہا جب میں نے بات نہیں مانی اُس نے میری ٹرانسفر کر دی اب وہ پیغام بھیجتا ہے میرے بستر تک آجاﺅ تبادلہ بھی رک جائے گا اور دوبارہ کبھی تمہیں تنگ نہیں کروں گا نوکری بھی تم شہزادیوں کی طرح کرو گی بھٹی صاحب میں نے شریفانہ زندگی کو ترجیح دی تو اُس نے میرا تبادلہ کرا دیا میں اور میرے جیسی بے آسرا لڑکیاں اِن سرکاری دفتروں میں جب تک جنسی کھلونہ نہیں بنتیں آرام سے نوکری نہیں کر سکتیں میرے ماں باپ مر چکے ہیں میںاور میری دو بہنیں زندہ ہیں جن کی کفالت میں کر تی ہوں محلے میں بھی اوباش لڑکے بے آسرا سمجھ کر تنگ کر تے ہیں پاکستان کے سارے شہروں میں مُجھ جیسی لڑکیاں ہر موڑ محلے گلی میں مدد مدد پکارتی ہیں لیکن سارے کو فی بن چکے ہیں جہاں زینب کی پکار کو ئی بھی سننے والا نہیں ہمارے شہر موہنجودڑو ہڑپہ بن چکے ہیں

جہاں موت بے حسی کا راج ہے جہاں پر اور بے آسرا لڑکیاں نازک پھولوں کی طرح کچلی جاتی ہیں کو ئی ہماری آواز سننے والا نہیں ہے مدد کا ہر دروازہ کھڑکی بند ہے کو ئی بھی ہماری آواز نہیں سنتا آپ کو نیک انسان سمجھ کر مدد کی بھیک مانگی آپ بھی عام انسانوں جیسے نکلے پھر ناز چلی گئی اور جاکر کسی طاقت ور کی keepبن گئی تاکہ درندوں کے اِس معاشرے میں زندہ رہ سکے میری رگ رگ پور پور ندامت کی آگ میں جھلس رہی تھی پھر میں نے ایک فیصلہ کیا او ر سو گیا اگلے دن میں ناز کو مسیج کیا کہ بیٹا ایک بار آکر مل جاﺅ مجھے تم سے بات کر تی ہے تو اگلے دن وہ میرے سامنے بیٹھی تھی وہ شرمندہ شرمندہ سی تھی اُس کی مدد کے لیے میں اپنے بڑے بیوروکریٹ سے بھی مستقل مدد کر وعدہ لے چکا تھا کہ اب میں بولا ناز تم نے جو آفر کی تھی میں آج وہ قبول کر تا ہوں لیکن رشتہ میں طے کروں گا آج سے تم میری بیٹی ہو میںاپنی بیٹی کی طرح تمہاری دیکھ بھال کروں گا اور اِس مددمیں فلاں سرکاری آفسر بھی شامل ہے اب تمہیں جب بھی ضرورت ہو گی ہم دونوں باپ بن کر تمھاری مدد کریں گے میری بات سن کر ناز حیران ہوئی پھر اُس کے چہرے پر خوشی کے قوس قزاح کے رنگ بھکرتے چلے گئے اور آنکھوں میں تشکر کے موتی جھلملانے لگی ناز شکریہ کر کے چلی گئی کہ تو بہ کبھی غلط راستے پر جاﺅں لیکن اُس کے جانے کے بعد بھی میرا سانس گھٹ رہاتھا کہ پتہ نہیں آج بھی ناز جیسی کتنی لڑکیاں اپنی بقا کے لیے کسی طاقتور کے سامنے دوستی کی آفر کر رہی ہو گی پتہ نہیں کب و ہ عادلانہ نظام آئے گا جہاں ایسی بے کس لڑکیوں کو کسی کی مدد کی ضرورت نہیں ہو گی ۔