ابھی کچھ لوگ باقی ہیں جو اُردو بول سکتے ہیں

اظہار کرو، انتظار نا کرو از شہریار خاور

دیکھئے صاحب! میں بالکل بھی پاگل نہیں ہوں. ہاں میرے الفاظ سننے میں پاگل پن ضرور لگتے ہیں مگر حقیقت میں ایسا نہیں ہےدیکھئے آپ میری بات پر دھیان ضرور دیجئے. بیشک پاگل سمجھ کر پتھر مار دیں مگر ایک لمحے کو میری بات پر دھیان ضرور دی ۔ ایک بار…

لارنس گارڈن، سائبیریا اور عشق۔۔۔ شہریار خاور

عایشہ کے ساتھ کامران کی پہلی ملاقات ایک کانفرنس میں ہوئی. دیکھنے میں عام سی لڑکی تھی. کھلتا ہوا گندمی رنگ، سرو قد، متناسب جسم، کالی گہری آنکھیں، لمبی لمبی مخروطی انگلیاں، سر پر سکارف، ایک کلائی میں پتلی پتلی سونے کی دو چوڑیاں اور سادہ سا…

سنہری دروازوں والی مسجد اور چیکو سلواکیہ کی اینا

دبئی ایئر پورٹ شاید دنیا کا وہ واحد ائیرپورٹ ہے جہاں ہر قومیت، ہر رنگ، ہر نسل اور ہر زبان بولتا شخص نظر آتا ہے. میں اس بہت بڑے ایئر پورٹ پر پچھلے ایک گھنٹے سے مارا مارا پھر رہا تھا جی نہیں، مجھے کسی مخصوص فلائٹ کیلئے کسی خاص گیٹ کی تلاش…

کتوں والی سرکار اور سین زوخت۔ شہریار خاور

تمھیں یاد ہے، کچھ عرصہ قبل، تم نے مجھ سے ایک سوال پوچھا تھا اور میں نے کوئی جواب نہیں دیا تھا؟’ بابا جی نے اچانک پوچھا ‘ہاں….!’ میں نے سوچتے ہوئے کہا. ‘آپ کسی عجیب سے لفظ کے بارے میں بتا رہے تھے’.سین زوخت……..یعنی “خواہشوں کا تعاقب”.’ باباجی…

اداسی کے پیغمبر

میرا نام کامران اسماعیل ہے. تقریباً پینتالیس سال عمر ہے. پیدا پاکستان میں ہوا لیکن بچپن اور جوانی ساری امریکا میں گزری. ہمیشہ سے ہی نفسیات میں دلچسپی رہی. لہٰذا سائیکالوجی میں ہی ماسٹرز اور ڈاکٹریٹ کیا. پھر مزید دل کیا تو سائکو انالیسس یعنی…

نیک روحوں کا مسیحا

میں تمام نیک روحوں کا مربی اور سرپرست ہوں. میاں فرہاد مصطفیٰ کی روح کا، عائشہ بیگم کی روح کا اور تمھاری روح کا بھی زینب.’ اس کے چہرے پر بدستور وہ شفیق مسکراہٹ رقصاں تھی ۔میں ایک دفعہ تو کانپ ہی اٹھی‘آپ موت کا فرشتہ ہیں؟ روح قبض کرنے آتے ہیں…

محبّت، ضرورت اور بلھے شاہ

اس کی شادی ہوئے دس پندرہ دن گزر چکے تھے، لیکن میں اب بھی حقیقت سے سمجھوتہ نہیں کر پایا تھا. اور حقیقت یہ تھی کے ہماری محبّت اور وہ بےنام سا رشتہ، جس نے ہمیں تین سال تک جوڑے رکھا تھا، کب کا ختم ہو چکا تھا. وہ کسی اور کی ہو چکی تھی اور میں،…

خدا کی محبت اور ہیرا منڈی

مجھے یہ کہنے میں کوئی آر نہیں کے لڑکپن کے دور میں مجھے گناہ سے بہت لگاؤ تھا. نیکی مجھے بوجھ سی لگتی تھی. ایک بزرگ کی وجہ سے مسجد جانا شروع کیا. کچھ عرصہ پانچ وقت نماز باقاعدگی سے باجماعت پڑھی. شروع میں بہت مزا آیا. پھر سمجھ آیا کے مزہ خدا…

پنوں مراثی

تھکی ہوئی چیل نے اپنے پر سمیٹے اورگھونسلے کا رخ کرنے سے پہلے ڈوبتے سورج کی جانب آخری نظر ڈالی. اس کے پروں تلے پھیلتی تاریکی کی چادر بہت تیزی سے شہر ملتان کے سنہرے گنبد اورمٹیالے مینار نگل رہی تھی. سردیوں کی وہ گہری شام بہت اداس تھی اور اک…

شبانہ کھسرا

جب ہم چند اکیلے ویران لوگ شبانہ کو دفن کر رہے تھے تو اچانک بارش شروع ہو گیئ. نا بادل گرجے نا بجلی کڑکی، بس یک دم ہلکی ہلکی پھوار پڑنی شروع ہو گیئ. مجھے پتا بھی نہیں چلا کے کب بارش ختم ہوئی اور کب میری آنکھوں سے آنسو جاری ہوے. ہوش تب آیا جب…