اسلام افسانے

اللہ پر توکل اور بھروسہ

*دلہن نے گھر میں داخل ہوتے ہی تنقیدی نظروں سے گھر کا معائنہ کیا، چہرہ پر کسی قسم کا تاثر نہیں تھا، گھر کیا تھا، ایک کچی* *چہاردیواری تھی، جس میں کچی پکی اینٹوں کو جوڑ کر ایک چھوٹا سا کمرہ نما بنا لیا گیا، چھت کھجور کے پتوں کی تھی، جس سے چھن چھن کر روشنی کمرے میں آرہی تھی، کمرے میں کوئی کھڑکی نہیں تھی، دیوار کو کاٹ کر کمرے کا ایک مدخل بنا لیا گیا تھا، کمرے کے فرش پر کھجور کے پتوں کا ایک گدّا بچھا ہوا تھا،گرہستی کے نام پر مٹی کی ایک ہنڈیا، ایک آبخورہ اور طاق پر ایک لکڑی کا پیالہ رکھا تھا۔*

*دلھن خامشی سے بستر پر بیٹھ گئی، تھوڑی دیر میں دولھے میاں خشک روٹی کے کچھ ٹکڑے اور سالن لائے اور بیوی سے کہا:” آئیے پہلے کھانا کھالیں، پھر باتیں ہوں گی، عورت پہلی بار مسکرائی اور دستر خوان پر بیٹھ گئی، دونوں اس طرح کھانے لگے جیسے انواع و اقسام کے کھانے سامنے پروسے گئے ہوں، کھانے کے بعد دونوں نے اللہ کا شکر ادا کیا، جس نے انھیں بھوکا نہیں رکھا۔*

*دلھن کمرے سے باہر نکلی اور ٹہلنے لگی، طاق پر رکھے ہوئے پیالے کو ہاتھ میں لے کر غور سے دیکھا، اس کی سمجھ میں نہیں آیا کہ پیالے میں کیا ہے، آخر شوہر سے دریافت کیا:” اس پیالے میں کیا ہے؟”* *شوہر کا چہرہ پھیکا پڑگیا، دبی زبان میں کہا:” روٹی کے کچھ ٹکڑے ہیں، پانی میں بھگو دیا ہے،صبح ہم دونوں کا ناشتہ ہو جائےگا،”* *دلھن نے پیالے کو پٹک کراسی طاق پر واپس رکھ دیا، آنکھوں کے شہابی ڈورے شرربار ہوگئے، رخسار کے انار دہکنے لگے، آتش غضب سے جسم کی حدت بڑھ گئی، دولھا گھبرا گیا ، پل بھر میں دلھن کی کیفیت کیوں بدل گئی،*

مزید پڑھیں: الرجی ۔۔۔ علامات ، اقسام ، اور بچاؤ

*لرزتی ہوئی آواز میں پوچھا:” کیا ہوا تم اتنا پریشان کىوں ہوگئیں؟”* *دلھن نے فیصلہ کن آواز میں کہا:” میں آپ کے ساتھ نہیں رہ سکتی، مجھ کو میرے گھر پہنچا دیجئے،”* *شوہر کی سمجھ میں کچھ نہیں آیا، اس نے منت سماجت کرتے ہوئے کہا:”* *ابھی تک تو آپ خوش تھیں، اچانک آپ کو کیا ہو گیا؟ کیا میں آپ کو پسند ایسی بات تھی تو نکاح سے پہلے آپ کو بتادینا چاھئے تھا،”* *دلھن نے نرمی سی کہا:” ایسی کوئی بات نہیں، آپ تو مجھے دل و جان سے پسند ہیں،* *” پھر میری غربت سے آپ گھبراگئیں؟ میں نے تو پہلے ہی آپ کے والد سے کہہ دیا تھا کہ مال ومنال کے نام پر میرے گھر میں الله کے نام کے علاوہ کچھ نہیں ہے، پھر بھی میں محنت کروں گا اور آپ کے نان و نفقہ کا انتظام کروں گا ان شاء اللہ،”*

*اس نے جواب دیا:” آپ پتہ نہیں کیا کیا کھے جارہے ہیں، در اصل آپ کو الله پر بھروسہ اور توکل نہیں ہے اور جس شخص کا توکل الله پر نہ ہو اس کے ساتھ میں کیسے رہ سکتی ہوں؟”* *” آپ نے میری کس بات سے اندازہ لگایا کہ مجھے الله پر توکل نہیں ہے؟” شوہر نے کہا* *اگر الله پر توکل ہوتا تو کل کی روزی کا انتظام آج ہی کیوں کرتے؟ پیالے میں روٹی نہ بھگوتے، کیا آپ نے پڑھا نہیں ہےومن یتوکل علی الله فھو حسبه، اگر آپ چاھتے ہیں کہ میں آپ کے ساتھ رہوں تو آپ ابھی اس پیالے کو لے جائیے اور کسی بھوکے کو کھلا دیجئیے، اللہ نے آج روزی دی ہے تو بھروسہ رکھئے الله کل بھی دے گا۔”* *شوہر نے پیالہ کو ہاتھ میں لیا اور زارو قطار رونے لگا۔* اور ہم…… . آؤ آج اپنے گریبان میں جھانک کر دیکھیں کیا ہمارا تقویٰ، توکل اس سٹیج پر ہے؟..